Blog

Rukhsat Howa To Ankh Mila Kr Nahi Gaya Shahzad Ahmad Urdu Sad Poetry

Rukhsat Howa To Ankh Mila Kr Nahi Gaya  Shahzad Ahmad  Urdu Sad Poetry
Rukhsat Howa To Ankh Mila Kr Nahi Gaya  Shahzad Ahmad  Urdu Sad Poetry

رخصت ہو تو آنکھ
ملا کر نہیں گیا



رخصت ہوا تو آنکھ ملا کر نہیں گیا

وہ کیوں گیا ہے یہ بھی بتا کر نہیں گیا

وہ یوں گیا کہ بادِ صبا 
یاد آ گئی

احساس تک بھی ہم کو دلا کر نہیں گیا

یوں لگ رہا ہے جیسے ابھی لوٹ آئے گا

جاتے ہوئے چراغ بجھا کر نہیں گیا

بس یک لکیر کھینچ گیا درمیان میں

دیوار راستے میں بنا کر نہیں گیا

شاید وہ مل ہی جائے مگر جستجو ہے شرط

وہ اپنے نقشِ پا تو مٹا کر نہیں گیا

تب تک تو پھول جیسی ہی تھی تازہ تھی اُس کی یاد

جب تک وہ پتیوں کو جلا کر نہیں گیا

وہنے دیا نہ اُس نے کسی کام کا مجھے

اور خاک میں بھی مجھ کو ملا کر نہیں گیا

شہزاؔد یہ گلا ہی رہا اُس کی ذات سے

جاتے ہوئے وہ کوئی گلہ کر نہیں گیا

 

شہزادؔ احمد

 

Rukshat hua tu aankh mila kr nahi gya

Woh kyon gya yeh bhi bata kr nahi gya

Woh yun gya k bad e saba yaad aa gai

Ehsaas tak bhi hum ko dila kr nahi gya

Yun lag rha hai jaiseey abhi laut aye ga

Jatey hiey chiragh bujha kr nahi gya

Bas ik lakeer khench gya darmiyan mein

Deewar rastey mein bana kr nahi gya

Shayed woh mil hi jye magar justuju hai shart

Woh apne naqsh e pa tu mita kr nahi gya

Ghar mein hai aaj tak wohi khusbu basi hui

Lagta hai yun k jaisey woh aa kar nahi gya

Tab tak tu phool jaisi hi taza thi us ki yaad

Jab tak woh patioon ko jala kar nahi gya

Rehney diya na us ne kissi kaam ka mujhe

Aor khak mein bhi mujh ko mila kar nahi gya

“SHEHZAD” yeh gila hi rha us ki zaat sy

Jatey huey woh koi gila kar nahi gya

 

SHEHZAD AHMAD

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker