Blog

Toot jye na bharam hont hilaoon kaisey Adeem Hashmi Urdu Sad Poetry

Toot jye na bharam hont hilaoon kaisey Adeem Hashmi Urdu Sad Poetry
Toot jye na bharam hont hilaoon kaisey Adeem Hashmi Urdu Sad Poetry

 




ٹوٹ جائے نہ
بھرم ہونٹ ہلاؤں کیسے

ٹوٹ جائے نہ بھرم ہونٹ ہلاؤں کیسے

حال جیسا بھی ہے لوگوں کو سُناؤں کیسے

خشک آنکھوں سے بھی اشکوں کی مہک آتی ہے

میں تیرے غم کو زمانے سے چھپاؤں کیسے

تیری صورت ہی میری آنکھ کا سرمایہ ہے

تیرے چہرے سے نگاہوں کو ہٹاؤں کیسے

تو ہی بتلا میری یادوں کو بُھلانے والے

میں تیری یاد کو اس دل سے بُھلاؤں کیسے

پھول ہوتا تو تیرے در پہ سجا بھی رہتا

زخم لے کر تیری دہلیز پہ آؤں کیسے

آئینہ ماند پڑے سانس بھی لینے سے عدیمؔ

اتنا نازک ہو تعلق تو نبھاؤں کیسے

 

عدیمؔ ہاشمی

 

Toot jye na bharam hont hilaoon kaisey

Haal jaisa bhi hai logoon ko bataoon kaisey

Khushk ankhono se bhi ashkon ki mehak ati hai

Main tere gham ko zamaney se chupaoon kaise

Teri surat hi meri ankh ka sarmaya hai

Tere chehrey se nighahoon ko hataoon kaisey

Tu hi batlaa meri yadoon ko bhulaney waley

Main teri yaad ko is dil se bhulaoon kaisey

Phool hota tu tere dar pe sajaa bhi rehta

Zakham le kr teri dehleez pe aaoon kaisey

Aayina maand parey saans bhi leney se “ADEEM”

Itna nazuk ho taluq tu nibhaoon kaisey

 

ADEEM HASHMI

FOR MORE

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker