Blog

Tere khiyal mein kuch aisa gum rha barsoon ترے خیال میں کُچھ ایسا گم رہا برسوں mazhar niazi urdu hindi poetry

Tere khiyal mein kuch aisa gum rha barsoon  ترے خیال میں کُچھ ایسا گم رہا برسوں   mazhar niazi urdu hindi poetry
Tere khiyal mein kuch aisa gum rha barsoon  ترے خیال میں کُچھ ایسا گم رہا برسوں   mazhar niazi urdu hindi poetry

 

مظہر نیازیؔ

دور رہا برسوں

ترے خیال میں کُچھ ایسا گم رہا برسوں

میں اپنے آپ سے بھی مل نہیں سکا برسوں

ترے بغیرمیری عُمر رائیگاںگُزری

کوئی بھی کام نہیں ٹھیک سے ہوا برسوں

کہا تھا تم نے کہ تم لوٹ آؤ گے اک دن

سو میں جہاں تھا وہیں پر کھڑا رہا برسوں

کہیں یہ ذائقہ تحلیل ہی نہ ہو جائے

میں اس سے مل کے کسی سے نہیں ملا برسوں

ترے بغیر میں بیساکھیوں سے چلتا ہوں

مگر کسی کا سہارہ نہیں لیا برسوں

تُمہارے ہاتھ کی دستک کی آس میں مظہر

میں اپنے گھر سے کہیں بھی نہیں گیا برسوں

 

 

Tere
khiyal mein kuch aisa gum rha barsoon

Main
apne aap sey bhi mil nahi saka barsoon

Tere
beghair meri umer raighaan ghuzri

Koi
bhi kaam nahi theek se huwa barsoon

Kaha
tha tum ne k tum loot aao gey ik din

So
main jahan tha wahin pr khara rha barsoon

Kahin
yeh zaiqa tehleel hi na ho jaey

Main
us se mil k kissi se nahi mila barsoon

Tere
beghair main beshakioon se chalta hoon

Magger
kissi ka sahara nahi lia barsoon

Tumhare
haath ki dastakh ki aass mein mazhar

Main
apne ghar se kahin bhi nahi gya barsoon

 

MAZHAR NIAZI

 

 

 FOR MORE OF MAZHAAR NIAZI

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker