Blog

HUM TUM SE BICHAR JAEIN GEIN KHALIL UL REHMAN QAMAR URDU HINDI POETRY

HUM TUM SE BICHAR JAEIN GEIN KHALIL UL REHMAN QAMAR URDU HINDI POETRY
HUM TUM SE BICHAR JAEIN GEIN KHALIL UL REHMAN QAMAR URDU HINDI POETRY

 

اس سے پہلے کہ
جُدائی کی خبر تم سے ملے

اشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے

آپ گر کر میری آنکھوں سے کہاں جائیں گے

اپنے لفظوں کو تکلم سے گرا کر جاناں

اپنے لہجے کی تھکاوٹ میں بکھر جائیں گے

تم سے لے جائیں گے ہم چھین کے وعدے اپنے

اب تو قسموں کی صداقت سے بھی ڈر جائیں گے

اک تیرا گھر تھا میری حدِ مسافت لیکن

اب یہ سوچا ہے کہ ہم حد سے گزر جائیں گے

اپنے افکار جلا ڈالیں گیں کاغذ کاغذ

سوچ مر جائے گی تو ہم آپ بھی مر جائیں گے

اس سے پہلے کہ جُدائی کی خبر تم سے ملے

ہم نے سوچا ہے کہ ہم تم سے بچھڑ جائیں گے

 

خلیل الرحمن
قمرؔ

 

Ask e nadaan se kaho baad mein pachtaein gein

Aap gir kr meri ankhoon se kahan jaein gein

Apne lafzoon ko takalum se gira kr janan

Apne lehjey ki thakawat mein bikhar jaein gein

Tum se ley jaein hum chen k wadoon apne

Ab tu qasmoon ki sadaqat se bhi dar jaein gein

Ik tera ghar tha meri had e musafat lekhan

Ab yeh sucha hai k hum had se ghuzar jaein gein

Apne afkar jala dalein gein kaghaz kaghaz

Such mar jye g tu hum app bhi mar jaein gein

Is se phele k judai ki khabar tum se miley

Hum ne sucha hai k hum tum se bichar jaein gein

 

KHALIL UL REHAM
QAMAR

FOR MORE

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker