Blog

Na Aty Humain is Main Takrar Kia Thi Allama Iqbal Urdu Hindi Poetry Lyrics

 Na Atey Humain Es Main Takrar Kia Thi

Magar Wada Karte Hoy Aar Kia Thi

 

Tumhare PyaminNe Sab Raaz Khola

Khata Es Main Bande Ki Sarkar Kia Thi 

Bhari Bazam Main Apne Ashiq Ko Tara

Tri Ankh Masti Main Hashar Kia Thi

Tamil Tu Tha En Ko Aney Main Kasid 

Magar Ye Bata Tarz Inkar Kia Thi

Khinche Khud Ba Khud Taoor Mosa

Kashish Teri A Shaunk Dedar Kia Thi

Kahi Zekir Rehta Ha Iqbal Tera

Fasun Tha Koi Teri Guftar Kia Thi




نہ آتے ہمیں اس میں تکرار کیا تھی

مگر وعدہ کرتے ہوئے عار کیا تھی

تمہارے پیامی نے سب راز کھولا

خطا اس میں بندے کی سرکار کیا تھی

بھری بزم میں اپنے عاشق کو تاڑا

تری آنکھ مستی میں ہشیار کیا تھی

تامل تو تھا ان کو آنے میں قاصد

مگر یہ بتا طرز انکار کیا تھی

کھنچے خود بخود جانب طور موسی

کشش تیری اے شوق دیدار کیا تھی

کہیں ذکر رہتا ہے اقبال تیرا

فسوں تھا کوئی تیری گفتار کیا تھی

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker